بسم الله الذي لا يضر مع اسمه شيء في الارض ولا في السماء وهو السميع العليم ما شاء الله جمعه 28 / فروری / 2020,

Instagram

اسلام اور سائنس

13 Aug 2019
اسلام اور سائنس

سید خالد جامعی

ہمارے بعض جدید اور قدیم علماء کے یہاں یہ سوال نہایت اہمیت کا حامل رہا ہے کہ سائنس کو مسلمان کیا جائے یا اسلام کو سائنسی مذہب قرار دیا جائے؟

علمائے کرام کا ایک گروہ سائنس کو مسلمان کرنا چاہتا تھا، اس گروہ میں مولانا احمد رضا خان بریلوی، علامہ سید سلیمان ندوی اور علامہ انور شاہ کشمیری رحمہم اللہ وغیرہ شامل تھے، اسی جذبے کے تحت علامہ طنطاوی مرحوم کی تفسیر کے بارے میں علامہ انور شاہ کشمیری اور علامہ سید سلیمان ندوی رحمہم اللہ نے نہایت گرم جوشی کا مظاہرہ فرمایا، مولوی احمد رضا خان بریلوی اور اسلامیہ کالج لاہور کے استاد پروفیسر حاکم علی کی خط و کتابت سے جناب بریلوی کا نقطہ نظر سامنے آتا ہے، فاضل بریلوی کے فقہی مقام کی شہادت ابو الحسن علی ندوی کی زبانی ملاحظہ فرمائیں "جزئیات فقہ پر ان کو جو عبور حاصل تھا ان کے زمانے میں ان کی نظیر نہیں ملتی"

پروفیسر حاکم علی نے فاضل بریلوی کو خط لکھا غریب نواز کرم فرما کر میرے ساتھ شامل ہو جاؤ تو پھر ان شاء اللہ تعالیٰ سائنس کو اور سائنس دانوں کو مسلمان کیا ہوا پائیں گے اس کے جواب میں فاضل بریلوی نے ایک کتاب《نزول آیات قرآن بہ سکون زمین و آسمان》تحریر کی اس کتاب کے آخر میں پروفیسر حاکم علی کی خواہش کا جواب دیتے ہوئے لکھتے ہیں

"محب فقیر! سائنس یوں مسلمان تو نہ ہوگی کہ اسلامی مسائل کو آیات و نصوص میں تاویلات دور از کار کرکے سائنس کے مطابق کردیا جائے یوں تو معاذ اللہ اسلام نے سائنس قبول کی نہ کہ سائنس نے اسلام کو"

سوال یہ ہے کہ کیا واقعتا سائنس کسی مذہب کی قبولیت کے لئے تیار ہے؟ کیا سائنس کی مابعد الطبیعیات اور اس کی علمیت مذہبی مابعد الطبیعیات اور علمیت کو قبول کر سکتی ہے؟ کیا سائنس کے تصور علم، حقیقت علم اور ماہیت علم میں مذہب کے تصور علم کی کوئی ادنی سی بھی گنجائش ہے؟ سائنس کے تصور علم میں علم وہ ہے جس میں شک کیا جا سکے، جس کی تردید کی جا سکے اور جس علم کو بالکل اسی طریقے سے حاصل کیا جا سکے جس طریقے سے وہ علم کسی اور نے حاصل کیا اگر کوئی علم اس تعریف پر پورا نہیں اترتا تو مغربی تصور علم اور سائنسی علم کے منہاج میں یہ علم نہیں جہل ہے لہذا سائنس کی نظر میں دین اور مذہب سے حاصل ہونے والا علم جہل ہے تو سائنس نعوذ باللہ اس جہل کو کیوں قبول کرے گی، نہ مذہب سائنس کے اس تصور جہل پر مبنی علم کو قبول کرے گا سائنسی اور مذہبی منہاج دونوں ایک دوسرے کو قبول نہیں کر سکتے اسی لئے مذکورہ بالا علمائے کرام کے جانشینوں میں سائنس کو مسلمان کرنے کےلئے کوئی بڑا اہل علم نہ کھڑا ہوسکا بعض نے کچھ کوششیں کیں لیکن یہ کوششیں فلسفے، سائنس اور فلسفہ سائنس کے علماء کی نظروں میں وقعت کی حامل نہ قرار پا سکیں اور یہ علماء بھی جدید سائنس اور اسلام کے تعلق پر کوئی اہم تحریر ضبط تحریر میں نہ لا سکے و گر نہ اللہ تعالیٰ نے انہیں وہ بصیرت دی تھی کہ وہ سائنس کے بخیے ادھیڑ کر رکھ دیتے  ـــــ

Your Comment